منقبت غوث اعظم

Rate this post

منقبت بارگاہِ غوثِ الاعظم دستگیر رضی اللّٰه عنہ

لاکھ شکر ہے ہم پہ بھی ہوئی عنایت غوثؓ اعظم کی

ملی در اقدس پہ جانے کی اجازت غوثؓ اعظم کی

منقبت غوث اعظم

مرشد لجپال کی مدعیت میں حاضری کا شرف ہوا حاصل

میرے مرشد کریم لجپال ہیں اولاد غوث اعظم کی

خدا ہی جانتا ہے بس حقیقت غوثؓ اعظم کی

بیاں ہم سے نہ ہو پائے گی عظمت غوثؓ اعظم کی

جلائے کتنے مردے ٹھوکروں سے آپؓ نے اکثر

زمانے بھر نے دیکھی یہ کرامت غوثؓ اعظم کی

ہر اک گوشہ منور عشقِ غوثؓ پاک سے دیکھا

مرے دل کے جہاں پر ہے حکومت غوثؓ اعظم کی

مریدی لاتخف کہ کر غلاموں پر کیا احساں

محمدؐ مصطفی کی سی ہیں شفقت غوثؓ اعظم کی

کروڑوں کو ولایت کی عطا سوغات کرتی ہے

علیؑ کے فیض سے جاری ولایت غوثؓ اعظم کی

غلاموں میں اگر شامل وہ کر لیں مجھ گدا کو بھی

بڑا احساں، بڑی ہوگی عنایت غوثؓ اعظم کی

مکمل نورِ حیدرؑ اور حسنی ہیں حسینی ہیں

دلائے یاد زہراؑ کی، سخاوت غوثؓ اعظم کی

کوئی قطبِ زماں ہو یا قلندر ہو ولی، ابدال

کہ ہر اک پر مسلم ہے ولایت غوثؓ اعظم کی

پکارا ہے مصیبت میں انہیں جس نے بھی جب دل سے

ہمیشہ کام آئی ہے محبت غوثؓ اعظم کی

جہاں پر کام کچھ فردِ عمل آئی نہیں واللہ

وہاں ناقص کے کام آئی ہیں نسبت غوثؓ اعظم کی

 

حضرت خواجہ غریب نواز معین الدین چستی قدس اللہ سرہ العزیز نے حضرت غوث پاک بقاباللہ رحمۃ اللہ تعالٰی علیہ کے بارے میں کیا خوب منقبت لکھی ہے

یا غوث معظم نور ہدے اے مختار نبی مختار خدا

سلطان دو عالم قطب علی حیراں زجلالت ارض وسما

ترجمہ- اے غوث اعظم فنافی اللہ بقاباللہ آپ رحمۃ اللہ تعالٰی علیہ ہدایت کے نور, اللہ اور رسولﷺ کے خلیفہ ہیں -دوعالم کے سلطان قطب اعلے ہیں آپ رحمۃ اللہ تعالٰی علیہ کی جلالت سے زمین وآسمان حیران ہیں

در صدق ہمہ صدیق وشی در عدل چوں عمری

اے کان حیا عثمان منشی مانند علی باجود وسخا

صدق میں صدیق اکبرؓ کی طرح، عدل میں عمر فاروقؓ کی طرح ہیں، کان حیا میں عثمان غنیؓ کی مانند اور جودوسخا میں حضرت علیؓ کرم اللہ وجہہ کی مانند-

در بزم عالی شانی ستار عیوب مریدانی

در مللک ولایت سلطانی اے منبع فضل جودوسخا

بزم نبیﷺ میں آپ رحمۃ اللہ تعالٰی علیہ کی شان بلند ہے مریدوں کے عیوب کے پردہ پوش ملک ولایت کے سلطان اے جودوسخا کے منبع!

منقبت غوث اعظم دستگیر

منقبت بحضور سیدی محبوب سبحانی ،قطب ربانی، غوثِ صمدانی، شہباز لامکانی، شیخ الشیوخ غوثِ اعظم رضی اللہ تعالیٰ عنہ

یہ وقت یوں اسیر ہے پیرانِ پیر کا

لمحہ صدی کا پیر ہے پیرانِ پیر کا

ہر سلطنت ہے زیرِ قدم غوث پاک کے

ہر تاجور فقیر ہے پیرانِ پیر کا

یہ شان ہے کہ لمسِ قدم پاک کے طفیل

ذرہ مہِ منیر ہے پیرانِ پیر کا

قادر کیا ہے قدرتِ کامل سے خود اسے

یعنی خدا قدیر ہے پیرانِ پیر کا

ایسا نہیں کہ صرف وہی دستگیر ہے

ہر بچہ دستگیر ہے پیرانِ پیر کا

کیونکر نہ ان پہ ذکرِ خدا و رسول ہو

ہر سانس جب سفیر ہے پیرانِ پیر کا

میرا گدا ہے دونوں جہانوں میں سرفراز

فرمانِ دلپذیر ہے پیرانِ پیر کا

اپنے تو خیر اپنے، ہیں دشمن بھی معترف

کردار بے نظیر ہے پیرانِ پیر کا

کیونکر نہ فیصلے ہوں اٹل میرے غوث کے

نورِ خدا مشیر ہے پیرانِ پیر کا

جو بھی غلامِ غوث ہے وہ سر بلند ہے

دشمن مگر حقیر ہے پیرانِ پیر کا

عرفانِ کردگار و شہِ دیں کے واسطے

عرفان نا گزیر ہے پیرانِ پیر کا

شاہوں میں بانٹتا ہے سیادت کی خلعتیں

منگتا بڑا امیر ہے پیرانِ پیر کا

نسبت جنابِ غوث کی ہے جس کا افتخار

عاجز وہی فقیر ہے پیرانِ پیر کا

دعاگو و دعاگو محمد عدنان چنڈہ بندیالوی

I am Muhammad Adnan Khan Chunda. I am student(Talib e Ilm) Of Jamia Muhammadiya Hanfiya Sulamani Near Jatta Adda Naivela. I love To Teach You Islamic Information like Masail,Hadees and Quotes of Bazurgane din.

Leave a comment