حضرت علامہ مولانا محمد عبدالحق بندیالوی صاحب رحمةًﷲتعالٰی علیه کا مختصر تعارف

Rate this post

حضرت علامہ مولانا محمد عبدالحق بندیالوی صاحب رحمةُﷲتعالٰےعلیه جامعة مظہریة امدادیة کے ناظمِ اعلٰی و مہتمم رھے ہیں۔

1- حضرت علامہ مولانا محمد عبدالحق بندیالوی صاحب رحمةً ﷲ تعالٰی علیه کی ولادت

محمد عبد الحق بن یار محمد بن سلطان محمد بن شاہ نواز 1349ھ/ 1930ء میں بندیال (ضلع خوشاب) کے مقام پر پیدا ھوئے۔ آپ کے والد مولانا یار محمد بندیالوی اپنے وقت کے امام تھے اورا ن سے بڑے بڑے فضلاء کو شاگردی کا شرف حاصل ھے۔ علامہ یار محمد بندیالوی سے تقریبََا نصف صدی ہندوستان و افغانستان سے آنے والے شائقین، رشد و ہدایت کا درس لیتے رھے۔

2-  حضرت علامہ مولانا محمد عبدالحق بندیالوی صاحب رحمةًﷲتعالٰی علیه کی تعلیم و تربیت

آپ نے صَرف و نَحو کی کتب اپنے والد صاحب سے پڑھِیں اور پھر موضع حفیظ بانڈی، مضافات مانسہرہ (ہزارہ) میں مولانا عبدالغفور صاحب کی خدمت میں حاضر ھوئے اور شرحِ شامی و رسائلِِ منطق کی تعلیم حاصل کی۔ یہاں سے ملوالی (اٹک) پہنچے اور (علمِ فقہ میں) ہدایہ، شرحِ عقائد اور کتبِ ادب مولانا نور محمد صاحب سے پڑھنے کے بعد واپس اپنے گھر لوٹ آئے۔ واپس آنے کے بعد کتبِ معقول مولانا محمد دین بدھوی سے اور بعض کتب مولانا عطاء محمد صاحب سے اپنے والد ماجد کے قائم کردہ مدرسہ میں پڑھِیں۔ پھر بخاری شریف استاذُالاساتذۃ شیخُ الحدیث مولانا محبُّ النّبی سے جامعة نظامیة رضویة وزیر آباد میں پڑھی، جبکہ یہاں ھی بعض کتب شیخُ القرآن علامہ عبدالغفور ھزاروی صاحب سے پڑھِیں۔ پھر واپس گھر تشریف لائے اور اپنے دارُالعلوم میں تمام علومِ حدیث کا درس حضرت علامہ مولانا عطاء محمد صاحب سے لیا۔ آپ کی دستاربندی جامعة رضویة مظہرِ اسلام فیصل آباد میں ھوئی۔ اور 1962ء میں آپ نے فراغت حاصل کی۔

3-  حضرت علامہ مولانا محمد عبدالحق بندیالوی صاحب رحمةًﷲتعالٰی علیه کی دینی و ملی خدمات

آپ دارالعلوم بندیال کے جملہ انتظام و انصرام کی دیکھ بھال کے علاوہ علومِ عربیة کی تدریس بھی فرماتے ہیں۔ علاقہ بھر کے شرعی فیصلے آپ ہی فرماتے تھے۔ آپ کے فیصلے کو لوگ دل وجان سے قبول کرتے تھے اور کسی کو اس فیصلے کے سامنے دم مارنے کی جرأت نہیں ھوتی تھی۔ علاوہ ازیں لوگوں کی روحانی بیماریوں کا علاج بھی فرماتے تھے۔

طالب علمی کے زمانے میں آپ موضع شادیہ (ضلع میانوالی) میں ایک زمیندار غلام محمد ولد خان بیگ جنجوعہ کی والدہ کی فاتحہ خوانی کیلئے تشریف لے گئے۔ وہاں ایک مولوی صاحب ذیاب فی ثیاب کے مصداق دجل و فریب سے اپنے آپ کو اہلِ سنّت والجماعت ظاہر کرتا تھا۔ آپ نے اس سے گفتگو کی اور اس کی بد عقیدگی کو عوام کے سامنے واضح کرکے اس کے دجل کے تاروپود بکھیر دیئے اور عوام کے عقائد کو محفوظ فرمایا۔ جماعتِ احمدیہ قائدآباد کے صدر ڈاکٹر مبارک علی شاہ اور سیکریٹری احمد علی شاہ نے بغدادی جامع مسجد میں آپ کے ہاتھ پر اسلام قبول کیا اور مرزائیت سے بیزاری و لاتعلقی کا اعلان کیا۔

1977ء کے انتخابات میں آپ نے جمعیت علمائےپاکستان کے جنرل سیکرٹری مجاہدِ ملّت علامہ مولانا عبدالستّار خان نیازی رحمةُﷲتعالٰےعلیه کی انتخابی مہم میں بھرپور حصہ لیا۔

محمد عبد الحق بندیالوی

4-  حضرت علامہ مولانا محمد عبدالحق بندیالوی صاحب رحمةًﷲتعالٰی علیہ کی بیعت و خلافت

آپ نے خواجہ پیرسیّد غلام محیُّ الدین شاہ گیلانی گولڑوی المعروف بابوجی سرکار رحمةُﷲتعالٰےعلیه سے شرفِ بیعت اور خلافت و اجازت کا اعزاز حاصل کیا۔ آپ کے دو صاحبزادے مظہرُ الحق اور ظفرُ الحق معاونِ خاص ہیں

5-  حضرت علامہ مولانا محمد عبدالحق بندیالوی صاحب رحمةًﷲتعالٰی علیه کی وفات

مؤرخہ 24 اگست 2023ء بمطابق 06صفرُالمظفّر1445ھجری بروزجمعرات کو 93 سال کی عمر میں بندیال میں آپ کا وصال ھوا۔

محمد عبد الحق بندیالوی صاحب کا آخری دیدار

6- حوالہ جات:-

ترميم

 حیاتُ العلماء، ص43

 مولانا غلام مہرعلی، الیواقیت المہریہ، ص104

 روزنامہ نوائے وقت لاہور، 18 جون 1974ء بحوالہ ضیائےحرم ختمِ نبوت نمبر دسمبر 1974ء ص120

 قرةعیون الاقیال فی تذکرةفضلاء البندیال صفحہ109 مفتی غلام محمد بندیالوی جامعة مظہریة امدادیة بندیال

صَلُّوا عَلَے الْحَبِیْب صَلّے ﷲُ تعالٰے علیهِ واٰلهٖ وسلّمـ

علماءِ اہلِ سنّت کا ایک درخشاں ستارہ غروب ھوگیا۔

تاجُ الفقہاء حضرت علامہ مولانا محمد عبدالحق بندیالوی صاحب رحمةًﷲتعالٰی علیه اس دنیاءِفانی سے پردہ فرما گئے ہیں۔ (إِنَّــا لِـلَّـهِ وَاِنَّـٍا اِلَـیْـهِ رٰجِــعُــوْنَ)

طالبِ دعا

رانا فرزندعلی

محمد عدنان چنڈہ بندیالوی

I am Muhammad Adnan Khan Chunda. I am student(Talib e Ilm) Of Jamia Muhammadiya Hanfiya Sulamani Near Jatta Adda Naivela. I love To Teach You Islamic Information like Masail,Hadees and Quotes of Bazurgane din.

Leave a comment