جمادی الاولی و جمادی الثانی کی فضیلت و اہمیت

Rate this post

اسلامی سال کا پانچواں مہینا ” جمادی الاولیٰ “ اور چھٹا ” جمادی الاخریٰ“ ہے۔ اسلامی مہینوں کا تعلق چونکہ چاند سے ہے اور گردش چاند کے سبب ان مہینوں میں موسم بدلتا رہتا ہے۔

ایک موسم کسی مہینے میں آتا ہے تو اگلے چند سالوں میں وہ موسم کسی اور مہینے میں آجاتا ہے، اسی لئے موسم کو اسلامی مہینوں کے ساتھ خاص نہیں کر سکتے۔

جمادی الاولی و جمادی الاخری نام رکھنے کی وجہ

لیکن جب ان مہینوں کے نام رکھے گئے اس وقت اس پانچویں اور چھٹے مہینے میں اتنی سردی پڑتی تھی کہ پانی جم جایا کرتا تھا

اور جمادی کا معنی ہے ”جم جانا “ اسی مناسبت سے پانچویں مہینے کو ” جمادی الاولیٰ “ اور چھٹے مہینے کو ” جمادی الاخریٰ “ کہا جانے لگا۔

(تفسیر ابن کثیر ، التوبة، تحت الآیة :129/4،36)

جمادی الاولی و جمادی الاخری 

جمادی الاولی کیسے گزاریں؟

پیارے پیارے اسلامی بھائیو! جمادی الاولی و جمادی الاخری گزارنے کیلئے نہیں بلکہ ہمیں اپنی آخرت کی بہتری کیلئے پورا سال ہی فرائض و واجبات کی پابندی کے ساتھ ساتھ نفلی عبادات کا بھی اہتمام کرنا چاہئے۔

کیونکہ اللہ پاک اپنے بندوں کے ہر نیک عمل پر فضل و کرم کی چھما چھم بارش برساتا ہے، بالخصوص کچھ مہینوں کے مخصوص ایام اور ان کی راتوں میں اس کے دریائے رحمت کی روانی مزید بڑھ جاتی ہے۔

اس کی رحمت کو پانے اور شوق عبادت بڑھانے کے لئے ان میں مخصوص عبادات اور اوراد وظائف پر اجر و ثواب کی بشارتیں دی گئی ہیں۔

جمادی الاولی اور بزرگان دین کے معمولات

جمادی الاولیٰ کے مہینے میں بھی شوق عبادت بڑھانے اور خوب خوب اجر و ثواب کمانے کیلئے بزرگان دین کے معمولات اور ان سے منقول عبادات اور کچھ اوراد و ظائف یہاں نقل کیے جارہے ہیں۔

جمادی الاولی (ایک فائیدہ)

… مشہور نحوی امام فراء کہتے ہیں : كُلُّ الشُّهُورِ مُذكَّرَةٌ إِلَّا جُمَادَین یعنی تمام مہینوں کے نام مذکر ہیں سوائے دو جمادی مہینوں (یعنی جمادی الأولی اور جمادی الاخریٰ یا الآخرة ) کے ان دونوں کے نام مونت ہیں۔ (الشماريخ في علم التاریخ، ص 13)

جب لفظ ” جہادی ” مؤنث ہے تو اس کی صفت بھی مؤنث ہی ذکر کی جائے گی اسی لئے ” جمادی الاول “ اور ” جمادی الآخر “ نہ کہا جائے۔

کیونکہ ”الاول “ اور ” الآخر “ مذکر ہیں بلکہ ” جمادی الأولی “ اور ” جمادی الاخریٰ “ کہنا چاہئے۔

ایسے ہی چھٹے مہینے کو ” جمادی الثانی بھی نہ کہا جائے کیونکہ ثانی وہاں آتا ہے جہاں اس کے بعد ثالث ( تیسرا) بھی ہو جبکہ یہاں تیسر انہیں۔

جمادی الاولی پہلی رات کے نوافل

جواہر خمسہ میں ہے کہ جمادی الاولی کی پہلی تاریخ کو صحابہ کرام رضی اللہ عنہم بیسں رکعت نماز پڑھا کرتے تھے

اور ہر رکعت میں سورہ فاتحہ کے بعد ایک بار سورہ اخلاص قُلْ هُوَ اللهُ أَحَدٌ پڑھتے۔ نماز سے فارغ ہونے کے بعد ایک سو مر تبہ درود شریف پڑھتے تھے۔

(جواہر خمسہ ، ص (21)

خلیفہ مفتی اعظم ہند فیض ملت، حضرت علامہ مفتی محمد فیض احمد اویسی رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں: ان شاء اللہ اس نماز کی برکت سے اللہ پاک بے شمار نمازوں کا ثواب عطا کرے گا۔

اسلامی مہینوں کے فضائل و مسائل ، ص 65)

جواہر خمسہ میں ہے: پہلی رات دور کعت اس طرح ادا کرے کہ پہلی رکعت میں سورہ فاتحہ کے بعد سورہ جمعہ اور دوسری میں سورہ مزمل پڑھے۔

(جواہر خمسہ ، ص 21)

جو اس مہینے کی پہلی رات اور پہلے دن چار رکعت نماز پڑھے اور ہر رکعت میں (سورۂ فاتحہ کے بعد ) گیارہ مرتبہ سورة اخلاص قُلْ هُوَ اللهُ أَحَدٌ) پڑھے تو اللہ پاک 90 سال کی عبادت اس کے نامہ اعمال میں لکھنے کا حکم دیتا ہے اور 90 ہزار سال کی برائیاں اس کے نامۂ اعمال سے مٹا دیتا ہے۔

(جواہر غیبی ، ص 618)

حضرت علامہ مفتی محمد فیض احمد اویسی رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ پہلی تاریخ کو بعد نماز مغرب 8 رکعت نماز چار سلام سے پڑھنی ہے۔

پہلی اور دوسری رکعت میں سورہ فاتحہ کے بعد سوره اخلاص قُلْ هُوَ اللهُ أَحَدٌ ) گیارہ گیارہ مرتبہ پڑھے۔ یہ نماز بہت افضل ہے اور اس کے پڑھنے سے ان شاء اللہ بے شمار عبادات کا ثواب پاک پروردگار کی طرف سے عطا کیا جائے گا۔

اسلامی مہینوں کے فضائل و مسائل، ص 65)

جمادی الاولی تیسری رات کے نوافل

جواہر خمسہ میں ہے: تیسری رات کو بیسں رکعت دس سلام سے پڑھے اور ہر رکعت میں سورہ فاتحہ کے بعد دس دس بار سورہ قدر پڑھے۔

نماز کے بعد صبح تک یہ تسبیح پڑھتا ر ہے: يَا عَظِيمُ تَعَظَّمْتَ بِعَظَمَتِكَ وَالْعَظَمَةُ فِي عَظَمَتِكَ يَا عَظِيم

(ترجمہ : اے عظمت والے ! تو اپنی بڑائی کے سبب عظمت والا ہے اور اسے عظمت والے !حقیقی بڑائی تیری ہی بڑائی ہے۔

(جواہر خمسہ ، ص (21)

جمادی الاولی ستائیسویں رات کے نوافل

جواہر خمسہ میں ہے : اس ماہ کی ستائیسویں تاریخ کو 8 رکعتیں دو سلام سے پڑھئے اور ہر رکعت میں سورہ فاتحہ کے بعد سورہ والضحی ایک ایک بار پڑھئے۔

پھر یہ تسبیح پڑھئے: “سبوح قُدُّوسٌ رَبُّ الْمَلَائِكَةِ وَالرُّوحِ (ترجمہ : پاک ہے ، بے عیب ہے فرشتوں اور روح کارب۔)

(جواہر خمسہ ، ص 22- لطائف اشرفی ، 231/2)

جمادی الاولیٰ  و جمادی الاخری  کے روزے

حضرت شاہ کلیم اللہ شاہ جہاں آبادی رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں: اس مہینے کی دوسری ، بار ہوئیں اور اکیسویں کو روزہ رکھنے کا بہت ثواب ہے۔

(مرقع کلیمی ، ص 199۔ جواہر غیبی، ص 618)

صَلُّوا عَلَى الْحَبِيبِ صَلَّى اللهُ عَلَى مُحَمَّد

جمادی الاخریٰ کیسے گزاریں؟

پیارے پیارے اسلامی بھائیو ! تمام اسلامی مہینوں کی طرح جمادی الاخریٰ بھی بڑی خیر و برکت کا مہینا ہے اور اس ماہ کی عبادت بہت افضل ہے۔

یہ مہینا استقبال ماہ رجب ہے گویا اس کی عبادت کا مقصد ماہ رجب کی حرمت ہے۔

اس ماہ مبارک کے متعلق بزرگانِ دین رحمتہ اللہ علیم سے مخصوص عبادات و نوافل منقول ہیں جنہیں اپنا کر اللہ پاک کی رضا و خوشنودی اور اس مہینے کی برکتیں حاصل کی جاسکتی ہیں۔

جمادی الاولی و جمادی الاخری 

جمادی الاخریٰ کے روزے

جمادی الاخریٰ میں روزہ رکھنے سے متعلق حضرت شاہ کلیم اللہ شاہ جہاں آبادی رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں: اس مہینے کی پہلی ، پندرہویں اور آخری تاریخ کو روزہ رکھنے کا بہت ثواب ہے۔

( مرقع کلیمی ، ص 199)

 جمادی الاخری پہلی رات کے نوافل

جواہر خمسہ میں ہے: جمادی الاخریٰ کی پہلی رات دور کعت نماز پڑھے اور سلام کے بعد خوب استغفار کرے۔ (جواہر خمسہ ، ص 22)

جمادی الاخری سال بھر تنگدستی سے حفاظت

جو شخص بارہ رکعتیں چھ۔ چھ سلام سے پڑھے اور ہر رکعت میں سورہ فاتحہ کے بعد سورہ قريش لا يُلف قریش پڑھے

اور نماز سے فارغ ہو کر سورہ یوسف کی تلاوت کرے اللہ کریم اسے تنگدستی اور مفلسی سے ایک سال تک محفوظ رکھے گا۔

(جواہر خمسہ ، ص 22)

فیض ملت، حضرت علامہ مفتی محمد فیض احمد اویسی رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں: بزرگان دین(رحمۃ اللہ علیم) سے منقول ہے کہ اس مہینے میں جو شخص چار رکعت نفل ادا کرے

اور ہر رکعت میں (سورۂ فاتحہ کے بعد ) سورة اخلاص ( قُلْ هُوَ اللهُ أَحَدٌ ) تیره (13) مرتبہ پڑھے تو اللہ کریم اس کے بے شمار گناہ معاف فرمادیتا ہے اور اس کے نامہ اعمال میں بہت سی نیکیاں داخل فرماتا ہے۔ اسلامی مہینوں کے فضائل و مسائل ، ص (67)

جمادی الاولی و جمادی الاخری 

جمادی الاولی و جمادی الاخری حرمت و عظمت کی بشارت

فیض ملت، حضرت علامہ مفتی محمد فیض احمد اویسی رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں: جو کوئی جمادی الاخریٰ کی اکیسویں رات سے آخری تاریخ تک ہر رات بعد نماز عشاء بیس رکعت نماز دس سلام سے پڑھے

اور ہر رکعت میں سورہ فاتحہ کے بعد سورہ اخلاص قُلْ هُوَ اللهُ أَحَدٌ ) ایک ایک بار پڑھے اللہ پاک اس نماز کے پڑھنے والے کو حرمت و عظمت بخشتا ہے۔

اسلامی مہینوں کے فضائل و مسائل ، ص 70)

جواہر خمسہ میں ہے: اکیسویں رات سے آخری تاریخ تک کئی صحابہ کرام علیہم الرضوان ہر رات بیسں رکعت نماز پڑھا کرتے تھے۔

(جواہر خمسہ ، ص 22)

جمادی الاولی و جمادی الاخری آخری عشرہ کے اعمال

کئی صحابہ کرام علیہم الرضوان اس مہینے کے آخری عشرے میں استقبالِ رجب المرجب کے لئے روزے رکھا کرتے تھے۔

(جواہر خمسہ ، ص (22)

فیض ملت، حضرت علامہ مفتی فیض احمد اویسی رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں: جمادی الاخریٰ کی آخری تاریخ کو روزہ رکھنا رجب شریف کے استقبال کے لیے مستحسن ہے۔

اسلامی مہینوں کے فضائل و مسائل ، ص 70)

حضرت علامہ عبد الرحمن ابن جوزی رحمۃ اللہ علیہ (وفات: 597ھ) فرماتے ہیں: انسان کو چاہیے کہ رجب شریف کی آمد سے پہلے استقبال رجب کے لئے خود کو گناہوں سے پاک صاف کرے۔

اپنی ہر خطا اپنے ہر گناہ پر نادم و شرمندہ ہو کر اللہ پاک کی بارگاہ میں توبہ کرے اور توبہ کے ذریعے اپنے دل کو گناہوں کی گندگی سے پاک کرلے۔

(النور في فضائل الایام والشہور ، ص (129)

صَلُّوا عَلَى الْحَبِيب صَلَّى اللهُ عَلَى مُحَمَّد

جمادی الاولیٰ اور جمادی الاُخریٰ کی متفرق عبادات

بعض نیکیاں ایسی ہیں کہ جن کے ذریعے ہر ماہ اجر و ثواب کمایا جا سکتا ہے۔ فرائض کی پابندی کے ساتھ ساتھ جمادی الاولی اور جمادی الاخریٰ میں ان نیکیوں کا بھی اہتمام کیجئے اوراللہ پاک کی خوب رحمتیں اور برکتیں حاصل کیجئے۔

روزے کے لئے مہینے کے افضل ایام

حضرت امام غزالی رحمۃ اللہ علیہ ہر مہینے کے افضل دنوں کے بارے میں فرماتے ہیں: مہینے کا پہلا، درمیانی اور آخری دن اور درمیان میں ایام بیض یعنی چاند کی تیرہ، چودہ اور پندرہ تاریخ یہ فضیلت والے ایام ہیں۔

ان میں روزے رکھنا اور بکثرت خیرات کرنا مستحب ہے تا کہ ان اوقات کی برکت سے اس کا اجر دُگنا ( ڈبل ) ہو۔

(احیاء العلوم، 1 / 318 منتظا)

حضرت ابو ذر رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے ارشاد فرمایا: اے ابو ذر ! جب تم ہر مہینے تین روزے رکھو تو تیرہوئیں، چودہویں اور پندرہویں کو رکھو۔

(ترندی 2 / 193 ، حدیث : 761)

حضرت ابو عثمان نہدی رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ میں سات روز تک حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ کا مہمان رہا۔

میں نے پوچھا: ”اے ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ ! آپ کس طرح روزے رکھتے ہیں یا آپ کے روزے کیسے ہوتے ہیں؟

فرمایا: ” میں ہر مہینے کے آغاز میں تین روزے رکھتا ہوں اور اگر کوئی عارضہ پیش آجاتا ہے تو مہینے کے آخر میں تین روزے رکھ لیتا ہوں۔

“ (مسند احمد ، 268/3، حدیث: 8641 مختصر ))

مہینے بھر کا ثواب

اعلیٰ حضرت ، امام اہل سنت، مولانا شاہ امام احمد رضا خان رحمتہ اللہ علیہ کی بار گاہ میں عرض کی گئی: ” ایام بیض میں روزہ رکھنے سے مہینے بھر کا ثواب ملتا ہے ؟

ارشاد فرمایا: ” ہاں ! پہلی ، دوسری، تیسری یا تیرہ، چودہ پندرہ یا ستائیس اٹھائیس، انتیس ان میں سے جس میں روزہ رکھے سب کا ثواب برابر ہے۔

(ملفوظات اعلیٰ حضرت ، ص 419)

ایک روایت میں ہے کہ سرور کونین صلی اللہ علیہ والہ وسلم ہمیں ایام بیض کے تین روزے رکھنے کا حکم دیا کرتے اور فرمایا کرتے: یہ ایک مہینے کے روزوں کے برابر ہیں۔

(نسائی، ص 397، حدیث : 2427)

پیارے پیارے اسلامی بھائیو! ہمارے پیارے نبی صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے ہر مہینے – کے ایام بیض میں روزے رکھنے کی ترغیب ارشاد فرمائی ہے اور بزرگانِ دین نے ہر مہینے روزوں کے لئے افضل ایام بیان فرمائے ہیں اس لیے ہمیں چاہئے کہ ان مہینوں میں بھی روزے رکھیں تا کہ خوب رحمتیں اور برکتیں حاصل ہوں۔

مومن کا موسم بہار

شروع میں بتایا گیا ہے کہ جب مہینوں کے نام رکھے گئے تو اس دوران پانچویں اور چھٹے قمری مہینے میں بہت زیادہ سردی ہوا کرتی تھی۔

جس کی وجہ سے پانچویں کا نام جمادی الاولی اور چھٹے مہینے کا نام جمادی الاخریٰ رکھا گیا۔

اسی مناسبت سے یہاں سردیوں میں کی جانے والی نیکیوں کے حوالے سے بزرگان دین رحمتہ اللہ علیہم کے چند اقوال اور ان کے واقعات نقل کیے جارہے ہیں۔

روزہ رکھیے اور قیام کیجئے

سردی ہو یا گرمی ہر موسم عبادت کا موسم ہے لیکن سردیوں میں کم وقت میں زیادہ ثواب کمانا نسبتاً آسان ہے کیونکہ سردیوں کے دن چھوٹے ہوتے ہیں، راتیں لمبی اور موسم ٹھنڈا رہتا ہے۔

جیسا کہ حضور اکرم صلی اللہ علیہ والہ و سلم نے ارشاد فرمایا: موسم سرما مومن کے لئے بہار کا موسم ہے کہ اس میں دن چھوٹے ہوتے ہیں تو مومن ان میں روزہ رکھتا ہے اور اس کی راتیں لمبی ہوتی ہیں تو وہ ان میں قیام کر تا ( یعنی نفل پڑھتا) ہے۔

(شعب الایمان، 416/3 ، حدیث : 3940)

مزید پڑھیں

تاریخ کے متعلق آرٹیکل،عیسوی تاریخ کی ابتدا اور اسلامی تاریخ کی…

I am Muhammad Adnan Khan Chunda. I am student(Talib e Ilm) Of Jamia Muhammadiya Hanfiya Sulamani Near Jatta Adda Naivela. I love To Teach You Islamic Information like Masail,Hadees and Quotes of Bazurgane din.

Leave a comment